کرم ایجنسی، پاک افغان سرحدی علاقہ غوزگڑی میں امریکی ڈرون حملہ، اب تک کوئی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی، ابتدائی رپورٹ"محبین اہلبیت (ع) اور تکفیریت" بین الاقوامی کانفرنس کیلئے مقالات کی کالامریکی ڈرون حملہ /شام میں حزب اللہ کے ۸ کمانڈو شہیددمشق المیدان اسکوائر میں خودکش دھماکہ / ۱۰ افراد شہید ۲۰ مجروحکابل میں امام بارگاہ کے قریب خودکش دھماکہ، 6 افراد جاں بحق اور متعدد زخمیکابل میں مسجد شیعیان پر دہشت گردوں کا حملہ / ۶ شہید ۳۳ زخمیافغانستان کو داعش کا گڑھ بنانا پاکستان کیخلاف امریکی سازش کا حصہ ہے، جنرل(ر) اسلم بیگکرم ایجنسی، سکیورٹی فورسز کی گاڑی پر یکے بعد دیگرے 2 بم دھماکے، 4 اہلکار زخمیشہید مدافع حرم محسن حججی کی تہران میں با شکوہ تشیع جنازہ / تفصیلی خبر جلد ہی اسلام ٹائمز پرسعودی لڑاکا طیاروں کی کاروائی ، یمن میں ایک ہی خاندان کے ۹ افراد جاں بحق
 
 
 

امام صادق (ع) کا مقام امام ابو حنیفہ کی زبانی

استقبال ماہ رمضان المبارک

کن فیکن

حکومت، اسکے تقاضے اور موجودہ حکمران

زیارات معصومینؑ کی مخالفت، ذہنی فتور ہے

دینی مدارس، غلط فہمیاں اور منفی پروپیگنڈہ

شناخت مجهولات کا منطقی راستہ

انسان کی شخصیت میں دوست کا کردار

اقبال اور تصورِ امامت (1)

روزے کا فلسفہ، چند معروضات

قیام امام حسینؑ کی اہمیت غیر مسلم دانشوروں کی نظر میں

امام حسین (ع) کے بارے میں آئمہ معصومین علیہم السلام کے ارشادات

تاریخ بشریت کا چمکتا ستارہ

فضیلت حضرت علیؑ غیر مسلم دانشوروں کی نظر میں

علی کی شیر دل بیٹی

حضرت فاطمۃالزہرا (س) بحیثیت آئیڈیل شخصیت

حضرت علی المرتضٰی۔ؑ ۔۔۔ شمعِ رسالت کا بےمثل پروانہ

زہراء (س) کیا کرے!

عظمت حضرت زہرا (س) غیر مسلم دانشوروں کی نظر میں

وہ جو اصلِ لفظ بہار ہے

انقلاب حسين بزبان حضرت امام حسين (ع)

محبت اہل بیت (ع)

مشہدالمقدس، مسافر خانہ حسینیہ شہید عارف الحسینی میں میرا قیام (آخری حصہ)

مکتب تشیع کے ترجمان؟

اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد

الشام۔۔الشام۔۔الشام

معجزہ گر سپہ سالار

شہادتِ امام حسین (ع) کے مقاصد اور انکا حصول

آئیں حسینؑ کا غم مل کر منائیں

 
نیوز لیٹر کیلئے اپنا ای میل ایڈریس لکھیں.
 
 
Wednesday 11 January 2017 - 18:33
Share/Save/Bookmark
فقہی اختلافات فرقہ واریت نہیں، وزیر داخلہ اپنی معلومات درست کریں، سبطین سبزواری
فقہی اختلافات فرقہ واریت نہیں، وزیر داخلہ اپنی معلومات درست کریں، سبطین سبزواری
 
 
ایس یو سی پنجاب کے صدر کا کہنا تھا کہ شیعہ سنی، مالکی حنبلی،حنفی، جعفری کے درمیان فقہی اختلافات کے باوجود ایک دوسرے سے سماجی تعلقات اور آپس میں شادیاں بھی ہیں۔ عید میلادالنبی اور عزاداری کے جلوسوں میں شیعہ سنی شریک ہوتے ہیں،اہلسنت فقیہہ امام مالک کے پیروکار بھی فقہ جعفریہ کے پیروکاروں کی طرح نماز ہاتھ کھول کر پڑھتے ہیں، اس لئے اس بنیاد پر قتل و غارت گری کا تصور بھی ممکن نہیں، دہشتگردی باقاعدہ طور پر پھیلائی گئی۔
 
اسلام ٹائمز۔ بھال سیداں فتح جنگ میں ایک سال قبل دہشتگرد تنظیم کے کارندے اپنے ہی کلاس فیلوز کے ہاتھوں مقامی سکول میں شہید ہونیوالے میٹرک کے طالبعلم مزمل حسین شاہ شہید کی پہلی برسی کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے شیعہ علماء کونسل پنجاب کے صدر علامہ سید سبطین حیدر سبزواری نے حیرت کا اظہار کیا ہے کہ وفاقی وزیر داخلہ کی دہشتگرد تنظیموں اور اسلامی مسالک کے درمیان اختلاف رائے کے بارے میں معلومات ناقص ہیں، شیعہ سنی اختلاف تاریخی اور صدیوں پرانے ہیں، اس کی بنیاد پر قتل و غارت گری نہیں ہوئی، فقہی اختلاف فرقہ واریت نہیں، فرقہ واریت اسلام کو کمزور کرنے کیلئے سازش کے تحت پھیلائی گئی۔ انہوں نے کہا کہ ضرب عضب آپریشن کے اثرات کو برقرار رکھنے کیلئے دہشتگردی اور انتہا پسندی پر قابو پانا ضروری ہے۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ دہشتگردی کیخلاف فوج نے موثر کارروائی کی مگر نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد نہیں ہوا۔

علامہ سبطین سبزواری نے کہا کہ شیعہ سنی، مالکی حنبلی،حنفی، جعفری کے درمیان فقہی اختلافات کے باوجود ایک دوسرے سے سماجی تعلقات اور آپس میں شادیاں بھی ہیں۔ عید میلادالنبی اور عزاداری کے جلوسوں میں شیعہ سنی شریک ہوتے ہیں،اہلسنت فقیہہ امام مالک کے پیروکار بھی فقہ جعفریہ کے پیروکاروں کی طرح نماز ہاتھ کھول کر پڑھتے ہیں، اس لئے اس بنیاد پر قتل و غارت گری کا تصور بھی ممکن نہیں، دہشتگردی باقاعدہ طور پر پھیلائی گئی۔ انہوں نے واضح کیا ہے کہ دہشتگردی کے ناسور کو پاکستان اور دنیا بھر سے ختم کئے بغیر ترقی اور امن ممکن نہیں، شخصی آمریت کو طول دینے اور جہاد کے نام پر سرکاری سرپرستی میں بننے والی دہشتگرد تنظیموں کے خاتمے کے بغیر نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد ہوگا اور نہ ہی ضرب عضب آپریشن کامیاب۔

علامہ سبطین سبزواری نے مطالبہ کیا کہ 18 نومبر 2014ء سے سپریم کورٹ کی طرف سے تحریک جعفریہ پاکستان پر پابندی اٹھانے اور لاہور ہائیکورٹ راولپنڈی بینچ کی آرڈر شیٹ کی روشنی میں وزارت داخلہ ملکی سلامتی اور سیاست میں اہم کردار ادا کرنے والی ٹی جے پی کی بحالی کا نوٹیفیکیشن جاری کرے۔ ان کا کہنا تھاکہ بیلنس پالیسی کے تحت پرامن شہریوں اور علما کو فورتھ شیڈول میں ڈالنے سے عوام میں اضطراب پایا جاتا ہے،اسے واپس لیا جائے اور صرف دہشتگردوں تک محدود رکھا جائے۔ علامہ سبطین سبزواری نے کہا کہ نیشنل ایکشن پلان کا حکومت نے خود ہی خاتمہ کر دیا ہے، کہیں وجود نظر نہیں آتا، حکومتی وزراء دہشتگرد تنظیموں کی سرپرستی کا تاثر ختم نہیں کر سکے جس کی طرف سپریم کورٹ نے بھی اشارہ کیا ہے۔
 
خبر کا کوڈ: 599190