پاراچنار بڑی تباہی سے بچ گیا، افغانستان سے آنے والی بارود سے بھری گاڑی پر بورکی بارڈر کے قریب فورسز کی فائرنگ، گاڑی دھماکے سے تباہکرم ایجنسی کے قریب افغانستان کے علاقے نری کنڈوں پر امریکی جیٹ طیاروں کی بمباری 16 افغان طالبان ہلاک، کئی شدید زخمی، افغان ذرائعپاراچنار بم دھماکے کا ایک اور زخمی کفایت حسین شہید ہوگیا، یوں بم دھماکے کے شہداء کی تعداد 26 ہوگئیپاراچنار، افغانستان کی سرحدی علاقے سے پاراچنار کے نواحی علاقوں پر یکے بعد دیگرے دو میزائل فائرپارا چنار پھر لہو لہو، امام بارگاہ کے قریب زوردار دھماکہ، خواتین و بچوں سمیت 22 افراد شہید، 55 سے زائد زخمیپاراچنار، دھماکہ کیخلاف احتجاج کرنیوالے مظاہرین پر فورسز کی فائرنگ، 2 افراد شہید، 9 زخمیپاراچنار، پاک افغان سرحد پر متھہ سنگر کے قریب ڈرون حملہ، متعدد ہلاکتوں کی اطلاعہر دور کے حکمرانوں نے سرائیکی وسیب کی محروم عوام کا استحصال کیا، کالعدم جماعتوں کیخلاف کارروائی نہ ہونیکے برابر ہے، علامہ ناصر عباسلودھراں کے قریب 2 رکشے ٹرین کی زد میں آگئے، 7 بچوں سمیت 8 افراد جاں بحقکراچی، فرید اور زکریا ایکسپریس میں تصادم، 17 افراد جاں بحق، ریسکیو کا کام جاری
 
 
 
 
 
 
نیوز لیٹر کیلئے اپنا ای میل ایڈریس لکھیں.
 
 
Tuesday 10 January 2017 - 17:06
Share/Save/Bookmark
سعودی فوجی اتحاد میں راحیل شریف کی شرکت سے ضیاء الحق کا نفرتوں بھرا دور واپس آسکتا ہے، حامد میر
سعودی فوجی اتحاد میں راحیل شریف کی شرکت سے ضیاء الحق کا نفرتوں بھرا دور واپس آسکتا ہے، حامد میر
 
 
نجی چینل کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے معروف صحافی نے تاکید کی کہ ایران اور سعودی عرب کو سی پیک میں شامل کرنا چاہیئے تاکہ ان دونوں ممالک میں قربتیں بڑھ جائیں، لیکن اگر پاکستان سعودی فورس میں شامل ہوتا ہے اور راحیل شریف اس کے کمانڈر انچیف بن جاتے ہیں تو ہم کئی سال پیچھے چلے جائیں گے۔
 
اسلام ٹائمز۔ معروف صحافی حامد میر نے نجی چینل "زیم ٹی وی" کے ایک پروگرام میں جنرل راحیل شریف کے سعودی اتحادی فوج کے کمانڈر انچیف بننے کی خبروں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر جنرل راحیل شریف اس کولیشن کے کمانڈر انڈر چیف بنتے ہیں تو ان کی اپنی انفرادی طور پر تو کوئی حیثیت نہیں ہے، ان کی اہمیت تو آرمی چیف کی وجہ سے ہے، اگر وہ اس کولیشن کے کمانڈر انچیف بنتے ہیں تو ظاہر ہے پاکستان سے یہ توقع کی جائے گی کہ وہ اپنے ریٹائرڈ فوجی وہاں بھیجے۔ حامد میر کا کہنا تھا کہ اس صورتحال کی وجہ سے مڈل ایسٹ کی بھڑکی ہوئی آگ کے شعلے پاکستان میں آسکتے ہیں، جب کہ ہم تو پہلے ہی بہت مسائل میں پھنسے ہوئے ہیں، ہمیں قوم کو فرقہ وارانہ آگ سے محفوظ رکھنا چاہیئے۔ انہوں نے تاکید کی کہ ایران اور سعودی عرب کو سی پیک میں شامل کرنا چاہیئے، تاکہ ان دونوں ممالک میں قربتیں بڑھ جائیں، اگر پاکستان سعودی اتحادی فوج میں شامل ہوتا ہے اور راحیل شریف اس کے کمانڈر انچیف بن جاتے ہیں تو ہم کئی سال پیچھے چلے جائیں گے اور جو ضیاء الحق نے نفرتیں پھیلائی تھی وہ دور واپس بھی آسکتا ہے۔
 
خبر کا کوڈ: 598833